حکومت جھوٹی ہے،بجٹ میں363ارب کے نئے ٹیکس لگائے،مفتاح ا سماعیل

کراچی (نیوزٹویو)پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ حکومت نے بجٹ میں 363ارب کے نئے ٹیکس لگائے ہیں  بجلی وافر ہے تو لوڈشیڈنگ کیوں ہےموجودہ حکومت جھوٹ کے سہارے پر چل رہی ہے پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما اور سابق وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نااہلی اور کرپشن کا بازار گرم ہے پورے پاکستان میں گیس اور بجلی کی لوڈشیڈنگ ہو رہی ہےانہوں نے کہا کہ ڈیزل سے جو بجلی بنا رہے ہیں وہ 20 روپے فی یونٹ ہے جبکہ ملک بھر میں ایل این جی گیس کی قلت ہے اور گیس کی بندش سے ملک کی برآمدات اور ٹیکس پر بہت فرق پڑے گا۔انہوں نے کہا کہ کراچی کی پوری صنعت آج بند ہے اور گیس نہیں مل رہی ہے۔ جون میں گیس قلت کی یہ حالت ہے تو دسمبرمیں کیا ہو گا۔ پچھلے سال ندیم بابر کو 3 سے 4 ڈالر پر گیس مل رہی تھی لیکن وہ نہیں لی گئ انہوں نے کہا کہ بجلی وافر ہے تو لوڈشیڈنگ کیوں ہو رہی ہے ؟ حماد اظہر نے کل غلط بیانی کی۔ حماد اظہر سے میرا بھی سوال ہے کہ نومبر دسمبر میں ڈیزل سے کیوں بجلی بنائی ؟مفتاح اسماعیل نے کہا کہ سب سے سستی بجلی کوئلے سے بنتی ہے جو نواز شریف کے دور میں پلانٹ لگائے گئے تھے۔ فرنس آئل اور ڈیزل سے بجلی کیوں بنائی جا رہی ہے ؟ عمر ایوب کہتے ہیں سرکلر ڈیٹ ختم کرنے کے لیے بجلی کے ریٹ بڑھائے ہیں انہوں نے کہا کہ اس وقت فرنس آئل استعمال کرنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔ حکومت نااہل اور بے ایمان ہے۔ شاہد خاقان عباسی نے جو خدمت کی آپ زندگی بھر نہیں کر سکتےانہوں نے کہا کہ حکومت جھوٹ کے سہارے  پر چل رہی ہے۔ جس ٹرمینل لگانے پر مجھے اور شاہد خاقان کو جیل میں ڈالا گیا وہ آج آپ 2 دن بند نہیں کر سکتے۔ اگر ہم نے ٹرمینل غلط لگایا تھا تو پھر آج آپ کیوں بند نہیں کر رہےانہوں نے کہا کہ 3 سال سے موصوف ایف اے ٹی ایف سے نکلنے کی کوشش کر رہے ہیں جبکہ ہم ملک کو بلیک لسٹ سے نکال کر گرے لسٹ میں لائے۔ شوکت ترین نے کہا بجٹ میں کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا لیکن حکومت نے بجٹ میں 363 ارب کے نئے ٹیکس لگائے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں