وزیراعظم کا بلوچستان میں ایل پی جی پلانٹ لگانے کا اعلان

زیارت (نمائندہ نیوزٹویو) وزیراعظم عمران خان نے بلوچستان میں ایل پی جی پلانٹ لگانے، ہیلتھ کارڈ دینےسمیت متعدد ترقیاتی منصوبوں کا اعلان کیا ہے اور کہا ہے کہ جن کی عیدیں اور علاج باہر ہوں ان کو کیا پتہ کہ اللہ نے پاکستان کو کیا نعمتیں دی ہیں۔ ملک مشکل وقت سے نکل آیا ہے رواں سال کے آخر تک پورے پنجاب کو ہیلتھ کارڈ مل جا ئینگے زیارت بھی سیاحت کا حب بن سکتا ہے بلوچستان میں پبلک پرا ئیوئٹ پارٹنر شپ کے تحت سڑکیں نہیں بن سکتیں زیارت میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا، ہم نے بلوچستان کو اپنایا، اپنا سمجھا جو پہلے کی حکومتوں نے نہیں سمجھا، جیسا پیسہ اب خرچ ہورہا ہے بلوچستان میں اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا، بلوچستان میں طویل فاصلوں کی وجہ سے بڑی سڑکیں بنانا ممکن نہیں۔ یقین دلاتا ہوں اب بلوچستان میں صحیح معنوں میں ترقی ہوگی۔ انہوں نے کہا، ایف سی کے جوانوں نے آج شہادتیں دیں، میں ایف سی کے شہید جوانوں اور ان کے اہلخانہ کے لیے دعا کرتا ہوں۔اُنہوں نے بتایا کہ ہمارا زیادہ پیسہ قرضوں کے سود میں چلا جاتا ہے، اس کے باوجود جتنا ممکن ہوسکا بلوچستان کے لیے فنڈز دیئے۔ ماضی کے ادوار میں جو پیسہ دیا گیا وہ صحیح معنوں میں خرچ نہیں کیا جاسکا۔وزیراعظم نے کہا کہ میں خوشخبری سنانا چاہتا ہوں، ہمارا ملک مشکل وقت سے نکل رہا ہے، اس سال جب گروتھ ریٹ کے فیگر 4 فیصد سے اُوپر آئئ تو اپوزیشن نے ماننے سے انکار کردیا۔ اگلے سال گروتھ ریٹ مزید اُوپر جائے گا، جب ہماری اگلی حکومت آئے گی تو ملک اور تیزی سے اوپر جائے گا انہوں نے کہا، مہاتیر محمد نے ملائیشیا کو ترقی دی، ان کے بعد آنیوالے شخص کو پیسہ باہر لے جانے کا شوق تھا، آج وہ جیل میں ہے اور ملائیشیا مشکل حالات میں ہے۔

عمران خان نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں ہم نے اپنے پچھلے دور حکومت میں سب سے تیزی سے غربت کم کی، وہاں انسانوں پر سب سے زیادہ خرچہ ہوا، خیبرپختونخوا کی ترقی کی سب سے بڑی وجہ سیاحت، دوسری چیز ہیلتھ کارڈ تھی۔ وہاں کی آدھی آبادی کو ہیلتھ کارڈ دیا۔ کہا کہ اس سال کے آخر تک پنجاب کے بھی تمام خاندانوں کو ہیلتھ کارڈ مل جائے گا۔ ہیلتھ کارڈ کی وجہ سے گاؤں دیہات میں پرائیویٹ اسپتالوں کا جال بچھ جائے گا۔ اگر آپ واقعی بلوچستان میں ترقی چاہتے ہیں آپ بھی سارے بلوچستان میں ہیلتھ کارڈ تقسیم کریں وزیراعظم نے کہا کہ یہاں گیس پائپ لائن بچھانے کے بجائے ایل پی جی کا پلانٹ لگانا زیادہ بہتر رہے گا، میں یقین دلاتا ہوں ہم اگلے مالی سال میں یہاں ایل پی جی کا پلانٹ لگائیں گے۔ پنجاب اور خیبرپختونخوا میں بہت سی جگہوں پر پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت سڑکیں بنا رہے ہیں۔ بلوچستان میں فاصلہ اتنا زیادہ ہے اور ٹریفک اتنی کم ہے کہ یہاں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت بھی سڑکیں بنانا ممکن نہیں ہم کمزور طبقے کو بھی اوپر اٹھائیں گے اس کے لیے ہم پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا پروگرام احساس پروگرام لارہے ہیں۔  نیاپاکستان ہاؤسنگ کا منصوبہ لے کر آئے ہیں، مزدور اور تنخواہ دار طبقہ اب اپنا گھر بناسکے گا۔ ہم گھر کے لیے بینکوں کے ذریعے پیسہ دے رہے ہیں۔ مزید بولے کہ، ہم نے بلوچستان کو 700ارب کا سب سے بڑا پیکیج دی بلوچستان کے لیے جہاں بھی گنجائش نکلے گی ہم فنڈز دیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں