ٹرین حادثے پر سیکرٹری ریلوے بورڈ اورڈی ایس سکھر آمنے سامنے،ٹریک ان فٹ تھا،ڈی ایس،غیرذمہ دارانہ بیان ہے ،سیکرٹری ریلوے

 اسلام آباد ( نمائندہ نیوزٹویو)ٹرین حادثے پر سیکرٹری ریلوے بورڈ آور سکھر کے ڈویژنل سپرنٹینڈ ینٹ ریلوے آمنے سامنے آگئے ڈی ایس سکھرنے ٹریک کوان فٹ قرار دے دیاسیکرٹری ریلوے بورڈ نے ڈی ایس سکھر کا بیان غیر ذمہ دارانہ قراردیتے ہو ئے کہا کہ حادثے کی و جہ فنی بھی ہو سکتی ہے وزارت حادثے کی ذمہ دار نہیں رمیش لال کی زیر صدارت قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی ریلوے کا ذیلی اجلاس ہو ا جس میں سیکرٹری ریلوے بورڈ مظہر رانجھا نے ڈہرکی حادثے پر بریفنگ دی سیکرٹری ریلوے بورڈ نے کہا کہ ڈہرکی حادثے کی ذمہ دار وزارت نہیں کنوینئر کمیٹی رمیش لال  نے کہا کہ ہم نے ایک ماہ پہلے کہہ دیا تھا کہ اس ٹریک پر حادثہ ہو گا سیکرٹری ریلوے بورڈ نے کہا کہ ڈہرکی حادثے کی وجہ کیا ہے اس کیلئے انکوائری ہو رہی ہےہو سکتا ہے کوئی ٹیکنیکل خرابی ہو جس کی وجہ سے حادثہ ہوا  کنوینئر کمیٹی رمیش لال نے پو چھا کہ ڈی ایس سکھر نے ٹریک کو ان فٹ قرار دیا ہے سیکرٹری ریلوے بورڈ مظہر رانجھا نے کہا کہ ڈی ایس سکھر کا بیان انتہائی غیر ذمہ دارانہ ہے تین 3بج کر 28 منٹ پہ ملت ایکسپریس کراچی سے فیصل آباد جا رہی تھی ٹرین 590 کلومیٹر پر پہنچی تو اسکی آخری تین بوگیاں ڈی ریل ہو گئیں اسی وقت کراچی سے سر سید ایکسپریس آ رہی تھی جس سے حادثہ ہو گیاسیکرٹری ریلوے بورڈ نے بتایا کہ حادثہ اتنے کم وقت میں ہوا کہ ٹرین کو پیشگی روکنے کے احکامات جاری نہ ہو سکے،

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں