ڈٰی جی آئی ایس آئی نے پا نامہ کیس پرا ثراندازہونے کی کوشش کی مجھ پرگرین بیلٹ کیس میں فیصلہ واپس لینے کے لیے دباو ڈالا ،سابق جسٹس شوکت صدیقی کے سپریم کورٹ میں الزامات

اسلام آباد (نمائندہ نیوز ٹویو) سابق جسٹس شوکت عزیزصدیقی نے سپریم کورٹ کے روبروالزا م عائد کیا ہے کہ ڈی جی آئی ایس آئی فیض حمید نے پا نامہ کیس پر ا ثرا نداز ہونے کی کوشش کی تھی وہ دو مرتبہ مجھ سے ملنے میرے گھر آئے اور مجھ پر گرین بیلٹ تجاوزات کیس میں فیصلہ و اپس لینے کو کہا انہو ں نےعدالت کو بتا یا سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور جسٹس آصف سعید کھوسہ تو چاہتے ہی مجھے نکالنا تھےسپریم کورٹ میں اسلام آباد ہائیکورٹ کے سابق جج شوکت عزیز صدیقی برطرفی کیس کی سماعت جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بنچ  نےکی شوکت عزیز صدیقی کے وکیل حامد خان نے دلائل دیتے ہو ئے کہا کہ میرے موکل کو چند قوتوں نے جان بوجھ کر ٹارگٹ کیاآئین کے مطابق سپریم جوڈیشل کونسل خود انکوائری کرتی ہے جسٹس مظہر عالم نے ا ستفسار کیا کہ انکوائری کا کیا مطلب ہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل خود بیان ریکارڈ کرتی  شوکت صدیقی کے وکیل حامد خان نے دلا ئل دیتے ہو ئے کہا کہ تمام ریکارڈ اور شہادتوں کا جائزہ سپریم جوڈیشل کونسل نے لینا ہوتا ہےمیرے موکل کو شوکاز نوٹس جاری کر کے عہدے سے ہٹا دیا گیا شوکت عزیز صدیقی کو ہٹانا بدنیتی ہےسابق جسٹس شوکت عزیز صدیقی عدالت میں جذباتی ہو گئے سابق جسٹس شوکت عزیز صدیقی  نے کہا کہ میں نے تقریر پریشر کو کم کرنے کیلئے کی بدقسمتی سے میں دسمبر 2015 سے پریشر میں ہوں سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور جسٹس آصف سعید کھوسہ تو چاہتے ہی مجھے نکالنا تھےجسٹس عمر عطاء بندیال نے کہا کہ ہم آپکی تقریر نہیں سننا چاہتے آپ نے تو نام گنوانے شروع کر دیئےادارے کی پالیسی کے مطابق دیکھیں شوکت صدیقی کے وکیل حامد خان  نے کہا کہ سپریم جوڈیشل کونسل جج کے خلاف انکوائری کرنے کا اختیار رکھتی ہے جج کو فارغ نہیں کر سکتی جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے شوکاز نوٹس کا جواب دیا تھاانہوں نےشوکاز کے جواب میں کہا کہ ڈی جی آئی ایس آئی فیض حمید ان کے گھر آئے تھے جنرل فیض حمید نے آئی ایس آئی ہیڈکوارٹرز سمیت گرین بیلٹس سے تجاوزات ہٹانے کا حکم واپس لینے کا کہا جنرل فیض حمید نے پاناما کیس پر بھی اثرانداز ہونے کی کوشش کی جسٹس عطا عمر بندیا ل نے کہا کہ تعجب ہے کہ آپ سے ڈی جی آئی ایس آئی نے ایسی بات کی آپ کو غصہ آئی ایس آئی پر تھا اور آپ نے تضحیک عدلیہ کی کی آپ کو اپنے ادارے کے تحفظ کے لیے کام کرنا چاہئے تھا ان اداروں کا سوچیں جو عدلیہ کے تحفظ کے لیے کام کرتے ہیں شوکت صدیقی کے وکیل حامد خان  نے کہا کہ بار بھی عدلیہ کی حفاظت کے لیے کام کرتی ہے جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ معذرت کے ساتھ بار کی اپنی ایک پالیسی ہے جس کے تحت وہ کام کرتا ہےمانتے ہیں کہ بار ججز کی معاونت کے لیے ہمیشہ موجود ہے بار کی تنقید کی وجہ سے جسٹس اقبال حمید الرحمان نے استعفی دیا بار کئی بار جذباتی ہو جاتا ہےآپ کسی اور بات سے ناخوش اور پریشان تھے اور آپ نے اپنے ادارے اور چیف جسٹس کی تضحیک کر دی  آپ خود تسلیم کر رہے ہیں کہ آپ کی ڈی جی آئی ایس آئی سے ملاقاتیں ہوئیں آپ دو بار ان سے ملے آپ کے ان سے تعلقات تھےجسٹس شوکت عزیز صدیقی نشست پر کھڑے ہو گئے انہوں نے کہا کہ میرے فوج میں کسی سے کوئی تعلقات نہیں ہیں ہر طرح کے خطرات کے باوجود میں اپنے خاندان کے ساتھ اسلام آباد میں مقیم ہوں جسٹس عمر عطا بندیال نے شوکت عزیز صدیقی سے مخاطب ہو کر کہا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ آپ ایک دیانتدار شخص ہیں بعدازاں عدالت نے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک کےلیے ملتوی کر دی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں