افغان سفیر کی بیٹی کااغواڈرامہ جھوٹ،پا کستان کو بدنام کرنے کی سازش،افغان سفیر تحقیقات کاحصہ بنیں،وزیرداخلہ

اسلام آباد(نیوزٹویو) پاکستان کے وزیرداخلہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ افغان سفیر کی بیٹی کو کسی نے اغوا کرنے کو کوشش نہیں کی یہ پاکستان کو بدنام کرنے کی کوشش اورملک کے خلاف جاری ہا ئبرڈ جنگ کا حصہ ہے ہماری تفتیش کے مطابق افغان سفیر کی بیٹی کا معاملہ اغوا کا کیس نہیں ہے ہمارے ملک کو بدنام کرنے کی کوشش ہو رہی ہے۔پاکستان کو بد نام کرنے کی کوشش ناکام ہوگی افغان سفیرکی بیٹی اوروہ خود مقدمے کا حصہ بنیں شیخ رشید نےپریس کانفرنس سے خطاب کرت ہو ئے کہا کہ ہم چاہتے ہیں افغان سفیرکی بیٹی مبینہ اغوا کیس کی تحقیقات کے لیے تعاون کریں کیس حکومت لڑے گی۔ ہم نے ان کے اغوا کی ایف آئی آر کاٹی ہے وہ چلی گئی ہے ہماری خواہش ہے کہ افغان سفیر کی بیٹی تحقیقات کا حصہ بنےوزیرداخلہ نے بتایا کہ اسلام آباد راولپنڈی کی700گھنٹے کی ویڈیو کو دیکھا گیا ہے۔ 200گاڑیوں اور ٹیکسیوں کے مالکان تک پہنچے ہیں۔انہوں نے کہا کہ چاروں ٹیکسی ڈرائیور بے گناہ ہیں۔ ایک 2 ڈرائیور سرکاری ملازم ہیں بچوں کا پیٹ پالنے کیلئے ٹیکسی چلاتے ہیں چاہتے ہیں ایک کیس کی بنیاد پر افغان سفیر کو نہیں جانا چاہیے تھا وزیر داخلہ نے کہا کہ پاکستان کیخلاف غیر اعلانیہ ہائبرڈ جنگ شروع کی گئی عمران خان اسرائیل اور بھارت کو ایک آنکھ نہیں بھاتا کچھ عالمی طاقتیں نہیں چاہتیں کہ پاک چین دوستی ہمالیہ سے بلند ہو، داسو واقعہ کی تحقیقات مکمل کرلی ہیں، چین کی حکومت ہماری تحقیقات سے مطمئن ہے، جوہر ٹاؤن کا واقعہ فیٹف اجلاس سے ایک دن پہلے کیا گیا۔جب کہ داسو کا واقعہ جی سی سی کی میٹنگ سے پہلے کیا گیا اور افغان سفیرکی بیٹی کا واقعہ افغان کانفرنس سے پہلے کیا گیا، ان کی ٹائمنگ دیکھیں، جو واقعات ہو رہے ہیں سازش کے تحت ہو رہے ہیں، دنیا کو تاثر دینے کی کوشش کی جا رہی ہے پاکستان میں امن و امان کا مسئلہ ہےانہوں نے کہا کہ مریم نواز کشمیر میں عمران خان کیخلاف مہم چلا رہی ہیں، آزاد کشمیر میں تحریک انصاف ہی کامیاب ہوگی، دھرنا مریم نواز کا شوق ہے، خوشی سے دھرنا دیں

 واضح رہے کہافغان سفیر نجیب اللہ علی خیل اپنے اہل خانہ کے ساتھ پاکستان چھوڑ کر ترکی اور دیگر عملہ افغانستان جا چکا ہے۔سینئیر سفارتی عملہ پی آئی اے کی پرواز سے 11بجکر10منٹ پر وطن واپس روانہ ہوا۔ افغانستان سفارتخانہ کے سٹاف ممبرز اسلام آباد سے پشاور کے راستے طور خم گئے۔افغان سفیرکی بیٹی کےساتھ  مبینہ اغوا کا واقعہ16تاریخ کوپیش آیا۔ واقعہ کا مقدمہ اسلام آباد کے تھانہ کوہسار میں درج ہے۔ افغان سفیر کی درخواست پر درج مقدمے میں پاکستان پینل کوڈ کی354، 365، 506 اور دفعہ 34 کو شامل کیا گیا ہے۔ابتدائی بیان میں لڑکی نے بتایا کہ گھر سے کچھ دور ٹیکسی میں شاپنگ کیلئے گئی تھی۔ واپسی کیلئے دوسری ٹیکسی میں سوارہوئی جوکچھ  دیر بعد راستے میں روک دی گئی۔اچانک ایک شخص آیا اور ٹیکسی میں سوار ہوکر مجھ  پرتشدد کرنے لگا۔ تشدد کے باعث میں بے ہوش ہوگئی ، آنکھ کھلی توپارک میں گندگی کے ڈھیر پر تھی۔جبک حکومتی تفتیش کے مطابق افغان سفیرکی بیٹی گھر سے پیدل نکل کرمارکیٹ آئی۔ ٹیکسی کرکے اسلام آباد کے سیکٹرجی سیون کی کھڈا مارکیٹ گئی۔کھڈ امارکیٹ سے افغان سفیرکی بیٹی نےایک اورٹیکسی لی اور فوٹیج کے مطابق وہاں سے راولپنڈی گئی۔ وزیرداخلہ نے بتایا کہ لڑکی راولپنڈی جانے کےبعد وہاں سےدامن کوہ پہنچی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں