بلاول امریکہ سے سیر سپاٹا کرکے خالی ہا تھ آئیں گے،فرخ حبیب

فیصل آباد (نیوزٹویو)وزیر مملکت اطلاعات و نشریات فرخ حبیب نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو کو امریکا سے سیر سپاٹا کرکے خالی ہاتھ ہی آنا پڑے گا۔احتساب کے ادارے بند کرنے کا مطلب ہے ان کو کھلی چھٹی دیدی جائےپاکستان میں پہلی مرتبہ پیسے کی منی لانڈرنگ نہیں ہورہی،باہر سے ڈالر آرہے ہیں۔ چوروں کا لنڈا بازار سوات جا رہا ہےاپوزیشن ای وی ایم اور الیکشن ریفارمز سے بھاگ رہی ہےکوویڈ 19 کی وجہ سے دنیا کی معیشتیں بیٹھ گئیں لیکن پاکستان میں عمران خان کی کامیاب حکمت عملی کے باعث نہ صرف معیشیت ترقی کرتی رہی بلکہ زندگیوں اور روز گار کو بھی تحفظ ملا، ن لیگ کی غلط پالیسیوں سے برآمدات ، سروسز سمیت ہر شعبہ نقصان میں تھا،عمران خان کی قیادت میں برآمدات بشمول سروسز 31 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا،  لنڈے کے سوغات سوات کے عوام کو گمراہ کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکے، سوات کرے غیور عوام عمران خان کا ہر اول دستے ہے، اپوزیشن ہارنے کے ڈر سےالیکٹرانک الیکشن مشینز (ای وی ایم )سے بھاگ رہی ہے۔ وہ اتوار کو سرکٹ ہاؤس فیصل آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ وزیر مملکت اطلاعات و نشریات فرخ حبیب نے کہا کہ 2016 تا 2018ترسیلات زر 19 ارب ڈالر رہا جبکہ 2021 میں آج 29 ارب ڈالر ہے، پی ٹی آئی حکومت میں10 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ن لیگ کے دور حکومت میں ترسیلات زر اور ایکسپورٹس 50 ارب ڈالر تھیں جبکہ پی ٹی آئی دور حکومت میں ترسیلات زر اور ایکسپورٹ 60 ارب ڈالر سے تجاوز کرگئیں ہیں جو کہ ن لیگ کے دور سے 10 ارب ڈالر ذیادہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملکی تاریخ میں پہلی بار ایکسپورٹ اور ترسیلات زر کی مد میں ریکارڈ 60 ارب ڈالر آئے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ یہ ہی وجہ ہے کہ اپوزیشن الیکٹرانک الیکشن مشینز(ایک وی ایم) سے بھاگ رہی ہے کیونکہ یہ سمجھتے ہیں کہ عمران خان نے معیشیت کو مضبوط اور ملک کے حالات بھی بہتر کرلئے ہیں تو یہ الیکشن ہار جائیں گے انھیں دھاندلی زدہ الیکشن سوٹ کرتے ہیں اسی لئے یہ ای وی ایم کی مخالفت کررہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ن لیگ کے دور حکومت میں ایکسپورٹس 24 ارب ڈالر تھی ، ہمارے دور میں گڈز ایکسپورٹ اور سروسز ایکسپورٹ ملا کر ریکارڈ 31 ارب ڈالرہیں،یہ بھہ ریکارڈ اضافہ ہے۔  انہوں نے کہا کہ زرمبادلہ، ترسیلات زر میں اضافے کی وجہ ہے ہے کہ اوورسیز پاکستانیوں کو عمران خان پر اعتماد ہے کہ عمران خان ملک کی تعمیر کررہا ہے، ماضی میں حکمران منی لانڈرنگ کرتے اورملک سے  پیسہ چوری کرکے باہر بھیجواتے اور اسی لوٹی ہوئی دولت سے اپنے بچوں کو کاروبار کراتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے قائد عمران خان نے بیرون ممالک میں نہ کوئی جائیدادیں بنائیں اور نہ ہی منی لانڈرنگ کی اور نہ جعلی اکاؤنٹس کا سہار لیا۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کے باعث دنیا کی بڑی بڑی معیشتیں بیٹھ گئیں،کئی ملک ایسے ہیں جن کی معیشتیں بینک ڈیفالٹ کی حد تک پہنچ گئیں،کورونا وباء کے دوران اپوزیشن ہم پر بھی مکمل لاک ڈاؤن کیلئے دباؤ ڈالتی رہی، مشورہ دینے والوں نے غریب آدمی کا نہیں سوچا،وزیراعظم نے مخالفت کے باوجود مکمل لاک ڈاؤن کی بجائے سمارٹ لاک ڈاؤن کی پالیسی اپنائی کورونا کے دوران مکمل لاک ڈاؤن نہ لگانے سے معیشت میں بہتری آئی۔ انہوں نے کہا کہ پہلی بار ایسا ہو رہا ہے کہ ڈالر ملک سے جانے کی بجائے ملک میں آ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے پاکستان کی معیشت کو درست سمت پر ڈال دیا ہے،موجودہ حکومت کے اقدامات کے باعث ریکارڈ ٹیکس جمع ہوا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں