سابق گورنراور وزیراعلیٰ سندھ ممتازبھٹوانتقال کر گئے،وزیراعظم کااظہار افسوس

اسلام آباد (نیوزٹویو)سابق گورنر اور وزیرااعلیٰ سندھ اورسابق وزیراعظم  ذوالفقار علی بھٹو کے کزن،پیپلز پارٹی کے بانی رکن ممتاز بھٹو کراچی میں انتقال کر گئے  ان کی عمر 94 برس تھی اور وہ گزشتہ کافی دنوں سے علیل تھے وزیراعظم عمران خان نے ان کی رحلت پر افسوس کا اظہار کیا ہے

۔ممتاز بھٹو کے ترجمان انور گجر کے مطابق ان کا انتقال کراچی کے علاقے گزری بلیوارڈ میں واقع ان کی رہائش گاہ پر ہوا۔ ان کی نمازِ جنازہ آبائی علاقے پوربھٹو لاڑکانہ میں ادا کی جائے گی جس کے بعد وہیں ان کے خاندانی قبرستان میں سپردِ خاک کر دیا جائے گا۔ممتاز بھٹو کے صاحبزادے امیر بخش بھٹو اپنے والد کی میت کراچی سے لاڑکانہ لے کر جائیں گے۔ ممتاز بھٹو 1970 میں گورنرو وزیر اعلی سندھ رہے، وفاقی وزیر ریلوے کمیونیکیشن اور شپنگ کارپوریشن بھی رہے۔ پیپلز پارٹی سے ناراضگی کے بعد 1985 میں سندھی بلوچ پشتون فرنٹ کے پہلے کنوینر بنے۔ 1989 میں اپنی جماعت سندھ نیشنل فرنٹ بنائی۔سردار ممتاز بھٹو 1996 میں نگراں وزیر اعلی سندھ رہے ،2011 میں ممتازبھٹو نے نواز لیگ میں اپنی پارٹی ضم کی۔نوازشریف سے اختلافات کے بعد 2016میں نواز لیگ کو خیرباد کہا،2017 میں ممتاز بھٹو تحریک انصاف میں شامل ہوئے۔وزیراعظم عمران خان نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ میں ممتاز بھٹو کی رحلت کی خبر پر بہت افسردہ ہوں میری دعا ئیں اور ہمدردیاں ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں