مریم نواز اورجمائما گولڈ اسمتھ ٹوئیٹرپرآمنےسامنے،نوک جھونک اورتنقید

اسلام آباد (نیوزٹویو) پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز شریف اور وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ جمائما گولڈ سمتھ سماجی ویب سائٹ ٹویٹرپرآمنے سامنے آگئیں جمائما نے مریم نواز کی آزاد کشمیر میں بچوں کے حوالےسے کی گئی تنقید پرکہنا تھا کہ میں نے یہود دشمنی پر مبنی حملوں اور دھمکیوں پر پاکستان چھوڑ دیا تھا جس پر مریم نواز نے جواب دیتے ہو ئے کہا کہ میری آپ سے کوئی ذاتی دشمنی نہیں آپ کا سابق شوہر کسی کے خاندان پر تنقید کرے گا تو اس کا جواب آئے گا اس کے لیے آپ اس کو الزام دیں اس نو ک جھونک  کی تفصیلات کے مطابق مریم کی جانب  سے کشمیرکی انتخابی مہم کے دوران جمائما کے بچوں کا ذکر کیا تھا مریم نواز شریف عمران خان کی جانب سے ان کے بیٹے جنید  پر کی گئی تنقید کا جواب دے رہیں تھیں۔ جس پر انہوں نے منگل کو ٹوئٹر پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے یہود مخالف حملہ قرار دیتے ہو ئے ٹو ئیٹرپرلکھا تھا کہ میں نے ایک دہائی تک میڈیا اور سیاست دانوں کی طرف سے یہود دشمنی پر مبنی حملوں (جن میں قتل کی دھمکیاں اور میرے گھر سامنے مظاہرے شامل تھے) کے بعد میں نے2004 میں پاکستان چھوڑ دیا تھا لیکن حملوں کا یہ سلسلہ ابھی تک جاری ہے  اس کا جواب مریم نے ٹوئٹر پر ہی دیا اور کہا کہ اس کے لیے انہیں اپنے سابق شوہر (عمران خان) کو موردالزام ٹھرنا چاہیے جو دوسروں کے خاندان کو ٹارگٹ کر رہا ہے۔جمائما گولڈ سمتھ اپنی ایک ٹویٹ میں مزید لکھا کہ ’مریم نواز شریف نے آج اعلان کیا ہے کہ میرے بچے یہودیوں کی گود میں پلے ہیں مریم نواز نے پیر کو پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کے ضلع حویلی میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا میں بچوں تک نہیں جانا چاہتی تھی، لیکن جیسی بات کرو گے اب منہ توڑ جواب ملے گا۔ مریم نواز نے مزید کہا کہ وہ (جنید) نواز شریف کا نواسہ ہے، گولڈ سمتھ کا نواسہ نہیں ہے۔ وہ یہودیوں کی گود میں نہیں پل رہا۔ منگل کو ٹوئٹر پر جمائما کو جواب دیتے ہوئے مریم نواز شریف نے لکھا میری آپ میں، آپ کے بچوں میں یا آپ کی ذاتی زندگی میں کوئی دلچسپی نہیں ہے کیونکہ میرے پاس کرنے اور کہنے کو اس سے بہتر کام ہیں۔ لیکن اس کے باوجود آپ کے سابق شوہر کسی کے خاندان کو نشانہ بنائے گا تو دوسروں کے پاس کہنے کے لیے اس سے بھی بری چیزیں ہیں۔ اس کے لیے آپ اپنے سابق شوہر کو الزام دیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں