سابق افغان صدر اشرف غنی متحدہ عرب امارات پہنچ گئے،یو اے ای کے دفترخارجہ کی تصدیق

 ابوظہبی(نیوزٹویو) سابق افغان صدر اشرف غنی متحدہ عرب امارات پہنچ گئے ہیں۔متحدہ عرب امارات نے سرکاری سطح پر سابق افغان صدر اشرف غنی کے یواے ای پہنچنے کی تصدیق کر دی ہے بدھ کو متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ امارات کی وزارت برائے خارجہ امور اور بین الاقوامی تعاون اس بات کی تصدیق کرتی ہے کہ متحدہ عرب امارات نے صدر اشرف غنی اور ان کے خاندان کو انسانی بنیادوں پر امارات آنے دیا ہے۔وا ضح رہے کہ گزشتہ اتوار طالبان کے کابل میں داخل ہونے کے بعد صدر اشرف غنی اپنے رفقا کے ساتھ ملک چھوڑ گئے تھے۔وہ مبینہ طور پرافغانستان سے عمان چلے گئے تھے ملک چھوڑنے کے بعد سوشل میڈیا پر جاری اپنے بیان میں اشرف غنی نے کہا تھا کہ انہوں نے ملک میں خون ریزی روکنے کے لیے افغانستان چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔اشرف غنی کا اپنے فیس بک پیج پر جاری پیغام میں کہنا تھا کہ ’آج مجھے مسلح طالبان کے سامنے کھڑے ہونے جو صدارتی محل میں داخل ہونا چاہتے تھے یا اپنے پیارے ملک کو چھوڑ جانے میں سے ایک مشکل انتخاب کا سامنا تھا۔اگر میں رہتا تو بے شمار ہم وطن شہید ہوتے اور کابل شہر کو تباہی و بربادی کا سامنا کرنا پڑتا اور نتیجہ 60 لاکھ کے شہر میں ایک بڑے انسانی المیے کی صورت میں رونما ہوتا۔ طالبان نے دھمکی دی تھی کہ وہ مجھے ہٹانے کے لیے کابل اور کابل کے لوگوں پر حملے کرنے کے لیے تیار ہیں۔ خونریزی کے سیلاب سے بچنے کے لیے میں نے بہتر سمجھا کہ باہر چلا جاؤں۔طالبان نے تلوار اور بندوق کی جنگ جیت لی ہے اور اب وہ اہل وطن کی جان و مال اوعزت کے تحفظ کے ذمہ دار ہیں۔ لیکن انہوں نے لوگوان کے دل نہیں جیتے۔ صرف طاقت نے تاریخ میں کبھی کسی کو جواز حکمرانی اور قانونی حیثیت نہیں دی اور نہ دے گی۔‘

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں