قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف کی افغان نائب وزیراعظم سے ملاقات

کابل (نیوزٹویو) وزیراعظم کے قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف طالبان سے بات چیت کے لیے کابل پہنچ گئے ہیں۔معید یوسف کے اس دورے کا مقصد افغانستان کے نئے حکمران طالبان کے ساتھ انسانی اور اقتصادی تعلقات کو مضبوط بنانا ہےمعید یوسف نے نائب وزیراعظم عبدالسلام حنفی سے ملاقات کی ہے ملاقات کے دوران افغان چیمبر آف کامرس کے اراکین بھی موجود تھے۔افغان نائب وزیراعظم کا کہنا تھا کہ افغانستان اور پاکستان برادر ملک ہیں جن کے تاریخی مذہبی اور ثقافتی تعلقات ہیں، پاکستان کے ساتھ باہمی احترام پر مشتمل بہتر تعلقات کے خواہاں ہیں۔ افغان سرزمین کو کسی ہمسایہ ملک کے خلا ف استعمال کی اجازت نہیں دیں گے۔اس موقع پر معید یوسف نے کہا کہ پاکستان افغان عوام کے ساتھ کھڑا ہے اور اپنی حمایت جاری رکھے گا، گہرے معاشی تعلقات کے بغیر امن و استحکام ممکن نہیں ہے، پاکستان علاقائی پراجیکٹس پر عمل درآمد کے لئے پر عز م ہے۔معید یوسف جو بین وزارتی رابطہ سیل برائے افغانستان (اے آئی سی سی) کے کنونیر بھی ہیں، نے جنگ زدہ ملک میں انسانی بحران کو روکنے کی کوششوں پر بات چیت سمیت دوسرے موضوعات پر بات چیت کے لیے پہلے 18-19 جنوری کو افغانستان کا دورہ کرنا تھا۔پاکستان دفتر خارجہ کے مطابق اس وقت یہ دورہ موسم کی شدید خرابی کے باعث ملتوی کرنا پڑا تھا۔ تاہم وہ ہفتہ کو کابل پہنچے اور اپنے دورے کا آغاز قائم مقام افغان وزیر خارجہ امیر خان متقی سے ملاقات سے کیا۔

افغانستان میں پاکستان کے سفیر منصور احمد خان نے ٹوئٹر پر کہا کہ ’ہمارے قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف ایک بین وزارتی وفد کے ہمراہ کابل میں ہیں۔ ان کے دورے کا آغاز قائم مقائم وزیر خارجہ امیر خان متقی سے ایک مثبت ملاقات سے ہوا ہےوہ انسانی اور اقتصادی معاملات کو مضبوط بنانے کے لیے متعدد سرکاری ملاقاتیں کریں گے۔واضح رہے کہ معید یوسف کا دورہ ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب افغانستان میں بڑھتے ہوئے انسانی بحران کو روکنے کے لیے پاکستان پوری دنیا سے مدد کی اپیل کر رہا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں