عمران خان نے بطور وزیراعظم مبینہ سائفرپرتحقیقات کیوں نہیں کرائیں؟وزیراطلاعات مریم اورنگزیب

اسلام آباد(نیوزٹویو)وفاقی وزیراطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے سوال کیا ہے کہ عمران خان نے بطور وزیراعظم مبینہ سائفر پر شفاف تحقیقات کیوں نہیں کرائیں؟ عمران خان نے کیوں 28 مارچ تک انتظار کیا؟ نیوٹرل کو مداخلت کرنے کی دعوت دینے پر آرٹیکل6 لگتا ہے قومی اسمبلی سے لے کر پنجاب اسمبلی تک عمران خان نے آئین شکنی کرائی، آر ٹی ایس سسٹم بٹھا کرچار سال تک ایک نااہل مسلط کیاگیا۔عمران خان کے بیان پر اپنے ردعمل میں وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا کہ پریس کانفرنس کا مقصد عمران خان کی نااہلیوں اور ناکامیوں کو سامنے لانا ہے،صحیح اور درست فیصلوں کو عوام تک پہنچانا میری ذمہ داری ہے ۔ برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی نے بھی عمران خان کے مقدمات کو جھوٹا قرار دیا،ایسٹ ریکوری یونٹ اصل میں عمران خان کا ایسٹ میکنگ یونٹ تھا۔انہوں نے کہا کہ عمران خان نے سپریم کورٹ میں وزیراعظم شہباز شریف کی ضمانت کے خلاف اپنی اپیل واپس لی اپیل واپس لینے کا مطلب ہے وزیراعظم کے خلاف جھوٹا مقدمہ بنایا گیا۔

انہوں نے کہا کہ میڈیا نے لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کی غلط تشریح پر مبنی رپورٹنگ کی،لاہور ہائیکورٹ کے فیصلےکے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کو عہدے سے نہیں ہٹایا گیا،پی ٹی آئی والے فیصلہ پڑھے بغیر دھمال ڈالتے ہیں پھر یوٹرن لے لیتے ہیں ۔عمران خان کا مقصد گالی دینا اور معاشرے میں انتشار پھیلانا ہے،عمران خان کا روزلگایاجانے والا تماشا اب بند ہونا چاہیے،فرح گوگی کو استعمال کر کے ذاتی فائدے حاصل کیے گئے۔مریم اورنگزیب نے کہا کہ نواز شریف 3 بارعوام کے دیئے گئے مینڈیٹ سے وزیراعظم بنے ،عمران خان کو جھوٹ بولتے ہوئے شرم آنی چاہیے،عمران خان کی نالائقی کی وجہ سے آج پاکستانی عوام مہنگائی کی چکی میں پس رہے ہیں۔ ،عمران خان نے 4 سال اپنی ناکامی کو چھپانے کے لیے انتقامی سیاست کی،عمران خان نے تمام اداروں کو استعمال کرکے مخالفین پر جھوٹے مقدمات بنائے،عدالتوں میں عمران خان کے بنائے مقدمات جھوٹے ثابت ہوئے،عدالتوں نے اپنے فیصلوں میں تحریر کیا کہ یہ تمام مقدمات بے بنیاد الزامات پر بنے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں